Sunday, 1 January 2006

H REHMAN SUROOR

 1غزل
لو دیت کی قست اے مہ قسمت نو بویا
ژانو وصال نصیب دربت نو بویا

     ہر ای آرزو پورا نو بوئے کیانی بوئے
    تھے مہ ای خوشپ دی حقیقت نو بویا

کویت اسپرو غیریکو تُو مہ بچین 
ہردی گدیریو پزا پھت نو بویا

     مُدام کرم تہ مو بائے اے مہ دینار
     رخمو نظر مہ وہشکی چت نو بویا!

  ہروش ستم مہ سورا کوس کلہ پت
آخر بدل تہ ہے عادت نو بویا

     تھے کیا جواب تہ حشرو میدانہ[
     عشقو چے حُسنو عدالت نو بویا

  مو کورے ناز ریکو سے نازاریتائے
  حُسنو جلوُ سوم نزاکت نو بویا!

سُرُورؔ قاتل ہیہ دُنیا مسصُوروؑ
وا مہ عشقو دی ملامت نو بویا



حمید الرحمان سُرُورؔ
غزل.2



بیتی رنجور پیئیران
وا کا مجبور پیئیران
                  نام و لزّت مو جُدا                           
                           ہر کا ضرور پیئیران                    
مو بائے نصیب دی متین جامِ الستو نشہ
کورویان مست ای ہروش جامِ وحدّتو نشہ
                           اریر زخمان سُوم بلد کوسو اُلفتو نشہ                       
                                          شیشہ ہردی وا کوسو بیکو چُور چُور پیئیران                           
بیتی رنجور پیئیران
وا کا مجبور پیئیران
مہ فلسفو کتابہ ہیہ بدنام راوشتائے
                  جام و شرابو تینین کی شیخ حرام راسشتائے         
        ہر ای میکشو ژاغہ بس جہنم راوشتائے                           
        پوشی زاہد ہوئے حیران جنّتہَ حُور پیئیران                
بیتی رنجور پیئیران
وا کا مجبور پیئیران
ہر ای وفو صلہ کی ہسے جفا کوریتائے
ستم کوراو تان الائے مدام خفا کوریتائے
            نہ کا غمان بوژیتائے نہ کا دوا کوریتائے
               زخمِ ناسُور چھومیکو مو کیا قُصور پیئیران  
بیتی رنجور پیئیران
وا کا مجبور پیئیران
ہر ای آشنا دی ہنون ہمو پیچھی بغانی
چھیردو ہردیو وا دی زخمی کوری بغانی
دردا لوختاوا ہمو سورا ہوسی بغانی
یہ کیا نوژان کی ہنون اگر سُرُورؔ پیئیران
بیتی رنجور پیئیران
وا کا مجبور پیئیران

                                            حمید الرحمان سُرُورؔ 

       
Ghazal~


تُو ای پری یا ای حُور سُبحان اللہ                                    
حُسنو جلوہ تہ بو خُور سُبحان اللہ                                     
                 
  غیچ بُرو تہ روئے مرینی کیا شک نیکی                                          
          چموٹار چھیرتہ چٹُور سُبحان اللہ                                                        

ہر ای پوشیرو تُو ہشار چھاریسان                                    
تہ پوشی ہوش نو بہچُور سُبحان اللہ                                  

                بوئے نزاکت حُسنو سوم متین معلوم                                           
              وا تہ ہے ناز ہے غُرور سُبحان اللہ                                             

ہزار کوشش بونی بے سُور روخثیکو                                                  
تہ یاد ہردیا بہچُور سُبحان اللہ                                                  
       تہ ستم دی ای احسان سرینی     

         نو بوئے ہردی تہ سار خُور سُبحان اللہ                                        
 تہ ہر ادا ہر نخرا ہردیا نقش    

   ریران مستیا سُرُورؔ سُبحان اللہ                                                                                      
ِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِ
ِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِِ



  کھوٹو قسمت کُوتاہ تقدیر غیچی ہائے   


زندگی غمو ای تفسیر غیچی ہائے


     تہ جُداگی اشٹوک تقدیرو بیرائے


    مجرم متان ہوستہ لکیرغیچی ہائے




عشقو جُنون راناران جُوش کوریتائے


ہیرا ہیارا تہ تصویر غیچی ہائے




     کوچائے یارو راہو ہوش نو اریت


لوڑیکو ہر ویشکی تب گیر غیچی ہائے




ای شیلی خوشپو مثال مہ اندگی


وا تہ صورت ہتوغو تعبیر غیچی ہائے


     رقیبو دُروت کی جنت راو اوشوم


     گیکو حثت ہوشا سے کھشکھیر غیچی ہائے


     وجُود سُرُورؔو کو کیاغ رے لوڑیکو


زلفِ جانانو ای اسیر غیچی ہائے


حمید الرحمان سُرُورؔ      
  














ہردی غمگین عقل حیران خُدایا!
گیتی دُنیا اوا پشمان خُدایا

    ستم نصیب ای زائلہ عشقہ ہونی
خور متین پیش مو کو غمان خُدایا

کوس ژان نیساوا کی سے چھُوم ہسیران
کیچہ بے درد ہتے انسان خُدایا

بس توغو وصالو تان افس نو اوشوئے
خُور دی اوشونی بو گمان خُدایا

لزّت بہشٹو دی بو کم سرینیان
مہ ژانی شینی بو ارمان خُدایا

اویری مہ ساری ہر سُرُورو اوائے
یہ زندگیا؟ کی طوفان خُدایا ؟












Ghazal



قدم تنار اُسنینیان بے بس تہ میخاتوتین
ساقی بویان نوژان وا افس تہ میخانوتین

دُنیا دویان نورغیچی ہروش وا کیا قُصور ہوئے              
گیرو بیرائے مجبور نا! جو بس تہ میخانوتین                 

اشکار غمِ دورانو، وا کا غمِ جانانو                                                    
ای زائلہ رینجزو گونیان واس واس تہ میخانوتین                                    

اسوم مُدام سُرُورا ای ٹھور وا نو پییئ سوم
رویان شکوہ ساقیا! ابس تہ میخانوتین

چھوئے انوسان گردیش دی سُرُورا ہش سریران
غیرداو پھیری کورونیان یور مس تہ میخانوتین




















0 comments:

اگر ممکن ہے تو اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔